میاں بیوی کے مسائل اورائکاحل غیر شرعی طریقے سے ہمبستری کرنا !

میرا شوہر مجھ سے پیار کرتا ہے۔ اوپر کی صورت حال کا حوالہ دیتا ہے. شریعت کیا کہتی ہے اس سے رہنمائی حاصل کریں۔ لکھتے ہوئے میں بہت تذبذب کا شکار تھا۔ لیکن اس کے لیے مشورہ کرنا اور دریافت کرنا ضروری تھا۔ لیکن میں جس چیز سے پریشان ہوں اور تنگ آچکا ہوں۔ یعنی میرے شوہر میرے ساتھ دبر میں وقت گزارتے ہیں۔ میں اللہ سے ڈرتا ہوں کہ کہیں اس کی وجہ سے مجھے عذاب نہ دیا جائے۔ اور اس کے علاوہ اس کے نتیجے میں بیماریاں پھیلنے کا اندیشہ بھی ہے۔ لیکن مصیبت یہ ہے کہ میرے شوہر اس کام سے پوری طرح مطمئن ہیں۔ بلکہ اسے مباح سمجھتا ہے۔

یہ حرام نہیں ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ ایک مسئلہ یہ ہے کہ وہ اسے حلال قرار دیتا ہے۔ اور اس سے متعلق تمام احادیث ضعیف ہیں۔ اور کہتا ہے کہ اس کو حلال کرنے کی ساری ذمہ داری اس پر ہے۔ مولانا صاحب آپ بتائیں کہ اس سلسلے میں آپ کی کیا رائے ہے؟ مجھے اس کے بارے میں معلومات دیں۔ میں اس سے بہت تھک گیا ہوں۔ اور اللہ کے عذاب سے ڈرو۔ اور بتائیں کہ اسے مطمئن کرنے کا حل اور طریقہ کیا ہے؟ مرد کے لیے اپنی بیوی سے زنا کرنا حرام ہے۔ بلکہ یہ بہت بڑا گناہ ہے۔

میں شامل ہوں۔ کتاب و سنت سے اس کی حرمت پر دلالت کرنے والی بہت سی دلیلیں ہیں۔ اور جمہور سلف علماء اور ائمہ کا بھی یہی قول ہے۔ اور اس سلسلے میں جو احادیث ہیں وہ اہل علم کے نزدیک قابل اعتراض ہیں۔ یعنی وہ استدلال کرنے پر قادر ہیں۔ اور ظاہر ہے کہ اگر ان کو ضعیف سمجھا جائے تو قرآن کریم بھی اس گھناؤنے اور گھناؤنے فعل کی حرمت پر دلالت کرتا ہے۔ ذیل میں ہم آپ کے سامنے کچھ دلائل پیش کرتے ہیں۔ علامہ محمد امین شنقیطی رحمۃ اللہ علیہ “ازوا البیان” میں نجومی ہیں۔ اللہ سبحانہ وتعالیٰ کا حکم ہے۔ جب وہ (عورتیں) پاک ہو جائیں گی۔ پھر آپ وہاں سے ان کے پاس آئیں۔ جہاں سے اللہ سبحانہ و تعالیٰ نے آپ کو حکم دیا ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *