خواجہ سرا کے بارے بڑی حقیقت اور ایک ننگا سچ

جناب عالی ہم بات کر یں گے خواجہ سراؤں کی اور بات کر یں گے جو ان کے بارے میں جو غلط باتیں مشہور ہیں جیسا کہ ان کی نمازِ ج ن ا ز ہ ان کے مذہب پر ان کی زندگی پر اور مختلف طرح طرح کی رسو مات پر جو کہ زیادہ تر جھوٹ پر مبنی ہے سچائی کچھ اور ہی ہے اور اس بات کا بھی ذکر کریں گے جو ایک ماں کے پیٹ سے خواجہ سراہ پیدا ہو تا ہے جب کہ وہی عورت صحیح سلامت بیٹے بیٹیاں بھی پیدا کر تی ہے ۔ جناب ِ عالی یہ دعا جس میں ہم رہتے ہیں یہ دنیا دو حصوں میں تقسیم نظر آ تی ہے اس دنیا کا ایک حصہ میل ہے

اور دوسرا حصہ فی میل ہے اور اکثر ہم روڈ پر شادی بیاہ دیگر ایسی تقریبات پر یا پھر چوراہوں پر یا کسی سرکس پر ناچتی گاتی ہو ئیں یا پھر پروگرام پر ڈانس کر تی ہوئی ہمارا سامنا ہو تا ہے

جنہیں ہم ادبی زبان میں خواجہ سراہ کہتے ہیں۔ عام زبان میں کھسرا اور انگلش میں گے کہتے ہیں ان کے عقائد پر روشنی پر ڈالنے سے پہلے ہم اس بات پر غور کر تے ہیں کہ آخر کار خواجہ سراہ پیدا کیسے ہو تے ہیں آئیے جانتے ہیں۔ سائنس اس پر کیا کہتی ہے کہ ایک عورت کے پیٹ میں خواجہ سراہ کی کیا وجہ ہو تی ہے۔ اسی لیے آپ سب سے درخواست ہے ان باتوں کو غور سے سنیے گا تو آ ئیے بات کر تے ہیں جب کوئی بھی بچہ بنتا ہے تو اس کی جنس کا تعین مرد کی جانب سے ملنے والے کروموسومز کے ذریعے ہو تا ہے اور اگر کسی مرد کا ایکس کروموسومز ملتا ہے تو اس جوڑ ے کے گھر لڑکی پیدا ہو تی ہے اور جب کہ وائے کر و مو سومز کا ملنا لڑکے کی پیدائش کا سبب بنتا ہے۔ بالکل اسی طرح خواجہ سراہ کی بھی پیدائش ہو تی ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.