مردانہ طاقت کے لئے کشتے کھا کھا کر اپنے آپ کو کھوکھلا مت کرو۔

مردانہ طاقت کے حوالے سے اس تحریر میں گفتگو کریں گے ۔مرداقت طاقت کے حوالے سے بہت لوگوں کو شکایت ہوتی ہے ۔ایک بات ذہن میں رکھئے یہ جو مردانہ طاقت ہوتی ہے نا اس کا تعلق فزیکل نہیں ہوتا اس کا تعلق آپ کے بدن کے ساتھ نہیں ہے اس کا تعلق سائیکالوجیکل ہوتا ہے اس کا تعلق نفسیات کے ساتھ ہے یہ جو مردانہ طاقت ہے کہ ہم پری میچور ایجوکو لیشن کہتے ہیں یہ فزیکل بیماری نہیں ہے یہ سائیکالوجیکل بیماری ہے یہ وہ بیماریاں ہیں جو ذہنی طور پر ہم ڈسچارج ہوتے ہیں اس وقت ہوتی ہیں اور ہم ساری زندگی مردانہ طاقت کے لئے کشتے کھاتے رہتے ہیں۔ مردانہ طاقت کا سب سے بہترین علاج جو پیارے پیغمبر جناب محمد ﷺ نے بتایا وہ استغفار ہے یہ ذہن سب سے زیادہ سب سے زیادہ طاقتور کب ہوتا ہے

جب ہم توبہ کرتے ہیں جب ہم استغفار کرتے ہیں جب ہم دوسروں کو ان کے کئے ہوئے جو اعمال ہم نے پکڑے ہوتے ہیں اس کو چھوڑتے ہیں یہ جو توبہ استغفار ہے اس کو کبھی سمجھئے اس کو کبھی طبی طور پر جانو ۔یہ توبہ کرنے سے یہ معاف کرنے سے یہ استغفارکرنے سے حقیقت میں ہمارے بدن کے امراض کیسے ٹھیک ہوتے ہیں ۔ مردانہ طاقت کا بہترین علاج استغفار کرو ۔استغفار کرو جو استغفار کرتا ہے اس کو سمجھو پیارے پیغمبر جناب محمد ﷺ نے فرمایا جو استغفار کرتا ہے اللہ اس کی زندگی میں برکت دے دیتا ہے۔ جب اس کی زندگی میں برکت آئے گی تو کیا اس کی طاقتوں میں برکت نہیں آئے گی اس کی نسل میں برکت نہیں آئے گی؟اور کبھی اس لیٹ کرو اس بیماری کے ساتھ استغفارکرنے سے کیا ہوتا ہے؟

یہ استغفارہوتا کیا ہے؟استغفار اصل میں وہ عمل ہے وہ پراسیس ہے جب انسان ایسا کام کرتا ہے ایسا عمل کرتا ہے ایسی بات بولتا ہے جو اس کی روح کے اوپر داغ لگادے جو اس کے دل کے اوپر داغ لگا دے جس کے بارے میں پیارے پیغمبر جناب محمد ﷺ نے فرمایا جب انسان گناہ کرتا ہے تو اس کے دل پر ایک داغ لگتا ہے جب دو گناہ کرتاہے دو داغ لگتے ہیں تین کرتا ہے تین داغ لگتے ہیں حتی کہ وہ گناہ کرتا جاتا ہے کرتاجاتا ہے اور اس کا دل سیاہ ہوجاتا ہے ۔جب دل سیاہ ہوجاتا ہے تو اس کا بدن بھی بیمارہوجاتا ہےاور اس کی روح بھی بیمارہوجاتی ہے اور جب یہ دونوں چیزیں بیمار ہوجائیں تو اس کی طبیعت خراب ہوجاتی ہے توبہ اصل میں اس دل کے اوپر جو لگے ہوئے داغ ہیں

اسکو دھونے کا نام ہے یہ استغفار اس دل کے اوپر لگے ہوئے داغوں کو دھونے کا نام ہے اس کو سادہ کر کے سمجھئے یہ مردانہ طاقت یہ مردوں کی شان ہے اور یہ رب کب دیتا ہے ؟ اس کو سادہ سمجھئے جب روح عالم ارواح سے آتی ہے تو صاف ستھری ہوتی ہے اور جب بدن میں آتی ہے اور وہ دیکھتی ہے کہ اس بندے نے ایسے کام کردیئے جس کی وجہ سے میرے اوپر داغ لگ گئے اب ان داغوں کی وجہ سے میں واپس علیین کی طرف نہیں جاؤں گی مجھے سجین میں جانا پڑے گا مجھے عالم ارواح میں جانے سے روک دیا جائے گا کیونکہ یہ جو اس نے داغ لگائے ہیں یہ اللہ کو اتنے ناپسند ہیں کہ اس کے بوجھ کی وجہ سے میں اوپر سفر نہیں کر پاؤں گی ۔

اس کی وجہ سے طبیعت بے چین ہوتی ہے طبیعت بے قرار ہوتی ہے طبیعت بے سکون ہوتی ہے اور اس طبیعت کی بے چینی بے قراری بے سکونی ۔ہمارے اندر بیماری پیدا کرتی ہے اب وہ روح اس داغ کی وجہ سے پریشان ہے اور وہ کیوں پریشان ہے کیونکہ یہ داغ اس کو و اپس اس کی اصل منزل کی طرف جانے سے رکاوٹ بنتے ہیں ۔ان داغوں کو دھونے کا نام ان داغوں کے غسل کا نام توبہ ہے استغفار ہے استغفار یہ استغفراللہ استغفراللہ نہیں ہے یہ استغفار اصل میں اپنے رب سے یہ کمٹمنٹ کرنا اپنے رب سے یہ عہد و پیمان کرنا کہ اے اللہ جو میں نے اپنی جان پر اپنے نفس پر ظلم کرلیا اور یہ عمل کرلیاجس کی وجہ سے یہ میرے اوپر داغ لگ گیا اللہ میں اس پر شرمندہ ہوں اے اللہ مجھے معاف فرماد ے اور جب بندہ توبہ کرتا ہے وہ داغ اللہ صاف فرمادیتا ہے

بلکہ ایک روایت میں تو آتا ہے وہ اللہ داغ صاف نہیں کرتا ان سارے گناہوں کو نیکیوں میں بدل دیتا ہے اور وہ گناہ نہیں ہوتے وہی ان کی سب سے بڑی طاقت بن جاتے ہیں اب ایک بندے نے دس گناہ کئے تو جب وہ تو بہ کرے گا تو اس کے اندر کتنےفیصد طاقت آئے گی ایک بندے نے سو گناہ کئے اس کے اندر کتنی طاقت آئے گی اور ایک نے ایک ہزار کئے اس کے اندر کتنی طاقت آئے گی۔اصل میں اسلام وہ بہترین طریقہ ہے جس میں اللہ سبحانہ نے اس کائنات کے ہر مسئلے کا حل رکھا ہے تو مردانہ طاقت کے لئے ہمیں سب سے زیادہ جس چیز کو پکڑنا چاہئے سمجھنا چاہئے انسان صرف ایک وجہ سے بیمارہوتا ہے اور وہ وجہ ہے اللہ سے دور ہوجانا علاج کیا ہے واپس اپنے رب کے قریب ہوجانا یہ جو توبہ ہے

جو استغفار ہے یہ جو اپنے رب کے سامنے جھکنا ہے اور پیارے پیغمبر جناب محمد ﷺ کے طریقوں کو فالو کرنا ہے ۔یہ حقیقت میں اللہ کے قریب ہونے کا نام ہے اور امام حکیم لقمان کیا فرمایا کرتے تھے ؟بیماری صرف اللہ سے دوری کانام ہے اور علاج واپس اس انسان کو اللہ کے قریب کرنے کا نام ہے اگر سب سے زیادہ طاقت بڑھانا چاہتے ہو قوت بڑھانا چاہتے ہو اور اگر ہمیشگی کی صحت پانا چاہتے ہو تو پیارے پیغمبر جناب محمد ﷺ ایک دن میں ستر بار توبہ کرتے تھے ایک روایت میں آتا ہے کہ سوبار توبہ کرتے تھے یہ توبہ کرو استغفار کرو یہ بہترین علاج ہے ۔شکریہ

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.