’’میری ماں کو کون خریدے گا؟ ‘‘

خلیجی ملک میں ایک شادی کی تقریب بڑی دھوم دھام سے جاری تھی دلہادلہن بڑی شان وشوکت کے ساتھ سٹیج پربراجمان تھے دلہن نےدلہاکے کان میں کہااپنی ماں کوسٹیج سے اتارو کیونکہ میں اسے ناپسندکرتی ہوں دلہااٹھامائیک پکڑا اورتین دفعہ اعلان کیامجھ سےمیری ماں کون خریدے گااعلان سن کرحاضرین پرسناٹاطاری ہوگیاپھردلہابولامیںاپنی ماں کوخود ہی خریدوں گا اس نے شادی کی انگوٹھی اتارپھینکی اوردلہن کوطلاق دیدی ماں کے قدموں کوبوسہ

دیتے ہوئے کہامیں نے نفع کاسوداکیاہے حاضرین میں سے ایک آدمی نے کھڑے ہوکراعلان کیامیں اس نوجوان کیساتھ اپنی بیٹی کانکاح کرتاہوں اورکہاکہ اس سے بہترخاوندمیری بیٹی کونہیں مل سکتااس نوجوان نےد نیابھی کمالی اورجنت بھی پالی۔یہ بھی پڑھیں ! شوہر کے گھر میں داخل ہوتے ہی بیوی کا غصہ پھوٹ پڑا:سارا دن کہاں رہے؟ آفس میں پتہ كيا، وہاں بھی نہیں پہنچے! معاملہ کیا ہے؟ وہ میں گائوں ۔۔۔۔۔ شوہرکی هكلاهٹ پر جھلاتے ہوئے بیوی پھر برسی، بولتے نہیں؟ کہاں چلے گئے تھے یہ گندا باکس اور کپڑوں کی پوٹلی کس کی اٹھا لائے؟وہ میں ماں کو لانے گاؤں چلا گیا تھا.شوہر تھوڑی ہمت کر کے بولاکیا کہا؟ آپ ماں کو یہاں لے آئے؟ شرم نہیں آئی تمہیں؟تمہارے بھائیوں کے پاس انہیں کیا تکلیف ہے؟چراغ پا تھی بیوی اس نے پاس کھڑی پھٹے ڈوپٹے سے آنکھیں صاف کرتی بوڑھی ماں کی طرف دیکھا تک نہیں ۔شوہر بولا انہیں میرے بھائیوں کے پاس نہیں چھوڑا جا سکتا تم سمجھ کیوں نہیں رہی.شوہر نے دبی زبان سے کہا.کیوں، یہاں کوئی قارون کا خزانہ رکھا ہے؟ تمہاری سات ہزار روپلي کی تنخواہ میں بچوں کی پڑھائی اور گھر خرچ کس طرح چلا رہی ہوں، میں ہی جانتی ہوں!بیوی کا لہجہ اتنا ہی شدید تھا،اب یہ ہمارے پاس ہی رہے گی شوہر نے سختی سے پیروی کی میں کہتی ہوں، انہیں اسی وقت واپس چھوڑ کر آؤ. ورنہ میں اس گھر میں ایک لمحہ بھی نہیں رہوں گی اور ان مہا رانی جی کو بھی یہاں آتے ذرا سی بھی شرم نہیں آئی؟کہہ کر بیوی نے بوڑھی عورت کی طرف دیکھا، تو پاؤں تلے سے زمین ہی سرک گئی ۔جھینپتے ہوئے بیوی بولی: ماں، تم؟ ہاں بیٹی! تمہارے بھائی اور بھابھی نے مجھے گھر سے نکال دیا. داماد جی کو فون كيا تو یہ مجھے یہاں لے آئے.بڑھیا نے کہا، تو بیوی نے چہکتی نظروں سے شوہر کی طرف دیکھا اور بولی.آپ بھی بڑے وہ ہو، ڈارلنگ! پہلے کیوں نہیں بتایا کہ میری ماں کو لانے گئے تھے؟اس میسج کو اتنا شیئر کرو کہ ہر عورت تک پہنچ سکےکہ ماں تو ماں ہوتی ہے! کیا میری، کیا تیری؟اللہ ہم سب کو ماؤوں کی خدمت کا جذبہ عطاء فرمائے..آمین

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.