بریکنگ نیوز: انتہائی مشکل وقت میں عمران حکومت کا نوجوانوں کے لیے شاندار سرپرائز، جان کر آپ بھی خوشی سے اچھل پڑیں گے

اسلام آباد (ویب ڈیسک)وزیراعظم عمران خان نے نوجوانوں کو روزگار کی فراہمی کیلئے کامیاب جوان پروگرام کے جائزہ کیلئے اہم مشاورتی اجلاس طلب کر لیا، عثمان ڈار نے کہا پروگرام کے تحت 5 ارب روپے کی تقسیم اسی ماہ مکمل ہوگی۔تفصیلات کے مطابق نوجوانوں کو روزگار کی فراہمی کیلئے کامیاب جوان پروگرام پر کام جاری ہے ، اس

حوالے سے وزیراعظم عمران خان نے جائزہ کیلئے اہم مشاورتی اجلاس طلب کر لیا ہے، جس میں معاون خصوصی عثمان ڈار، مشیرخزانہ حفیظ شیخ، گورنر اسٹیٹ بینک شریک ہوں گے۔اجلاس میں کامیاب جوان پروگرام میں شامل21 بینکوں کےنمائندگان کوبھی بلالیا گیا ہے اور وزیراعظم کو پروگرام میں اب تک کی پیش رفت رپورٹ پیش کی جائے گی، مشیر خزانہ حفیظ شیخ قرض کی تقسیم کیلئے فنڈز کی فراہمی پر بریفنگ دیں گے جبکہ عثمان ڈار اب تک شروع کاروبار،روزگار کی فراہمی پر مشتمل رپورٹ پیش کریں گے۔معاون خصوصی عثمان ڈار نے کہا پروگرام کے تحت 3 ہزار نوجوانوں کا ذاتی کاروبار شروع ہو چکا ہے، کاروباری سرگرمیوں سے 20 ہزار افراد کو براہ راست ملازمتیں ملیں، پروگرام کے تحت 5 ارب روپے کی تقسیم اسی ماہ مکمل ہوگی۔عثمان ڈار کا کہنا تھا کہ مزید 7سے 10 ہزار نوجوانوں کو ذاتی کاروبار کیلئے قرض دے رہے ہیں، نومبر تک مزید 50ہزار افراد کیلئے ملازمت اور روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے، 10 لاکھ نوجوانوں کو روزگار کی فراہمی کا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔معاون خصوصی نے کہا کہ مزید بینکوں کو شامل کرنے سے منصوبے میں تیزی آئی ہے، نوجوانوں میں قرض کی تقسیم کا مرحلہ مزید تیزی سے مکمل ہوسکے گا۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق نیب نے سابق وزیراعظم نواز شریف کا پاسپورٹ اور شناختی کارڈ منسوخ کرنے کی سفارش کر دی ہے ۔ڈی جی نیب راولپنڈی کی جانب سے وزارت داخلہ کو بھیجے گئے خط میں توشہ خانہ ریفرنس کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ نواز شریف کے وارنٹ گرفتاری عدالت سے جاری ہو چکے ہیں۔خط میں کہا گیا ہے کہ نواز شریف کے اشتہاری قرار دینے کا عمل بھی شروع کر دیا گیا ہے، لہذا نواز شریف کی سفری دستاویزات کو منسوخ کیا جائے۔نیب کی جانب سے وزارت داخلہ کو نواز شریف کا پاسپورٹ کو منسوخ کرنے اور شناختی کارڈ کو بلیک لسٹ میں شامل کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔خط میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ نواز شریف کو وطن واپس لانے کے لیے وزارت داخلہ انٹرپول سے بھی رابطہ کرے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.